ٹرمپ کی عمران خان سے تاریخی ملاقات، مسئلہ کشمیر پر ثالثی کی پیشکش

ٹرمپ کی عمران خان سے تاریخی ملاقات، مسئلہ کشمیر پر ثالثی کی پیشکش

واشنگٹن(نیوزلیب) امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے وزیراعظم پاکستان عمران خان کیساتھ تاریخی ملاقات میں مسئلہ کشمیر پر ثالثی کی پیشکش کر دی ہے۔

وزیراعظم عمران خان کی وائٹ ہاؤس میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ سے ون آن ون ملاقات اور بعد ازاں وفود کی سطح پر مذاکرات ہوئے جس میں دو طرفہ تعلقات مزید بہتر بنانے اور تجارتی روابط کے فروغ سمیت اہم معاملات پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے پاکستان کو مسئلہ کشمیر پر ثالثی کی پیشکش کرتے ہوئے کہا ہے کہ دونوں رہنما اس کیلئے اہم کردار ادا کر سکتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ پاکستان، افغانستان میں اب ہماری بہت مدد کر رہا ہے، دہشتگردی کیخلاف دونوں ملکوں نے مل کر جنگ لڑی، امید ہے کہ دونوں ممالک کے تعلقات میں مزید بہتری آئے گی۔ پاکستان کیساتھ افغانستان سے امریکی فوج کے انخلا پر بات جاری ہے۔ افغان مسئلے کے حل کیلئے پاکستان کے پاس وہ پاور ہے جو کسی اور ملک کے پاس نہیں ہے۔

امریکی صدر ٹرمپ نے پاکستانی قوم اور وزیراعظم عمران خان کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان ایک عظیم ملک ہے، انھیں دورہ پاکستان کی دعوت دی گئی تو وہ اسے ضرور قبول کرینگے۔

ڈونلڈ ٹرمپ نے گفتگو میں وزیراعظم عمران خان کو بتایا کہ ان کے بہت سے پاکستانی دوست ہیں، جو سارے آپ کی طرح سخت جان ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان نے افغان جنگ کے دوران صف اول ملک کا کردار ادا کیا، ہم پاکستان کیساتھ مل کر افغانستان سے نکلنے کا حل ڈھونڈ رہے ہیں، مجھے امید ہے کہ ہم افغان امن عمل میں کسی نیتجے پر پہنچ جائیں گے۔

اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ پاکستان کیلئے امریکا انتہائی اہمیت کا حامل ملک ہے۔ نائن الیون کے بعد امریکا اور پاکستان پارٹنر رہے۔