مشہور زمانہ گیت “جیا دھڑک دھڑک جائے” کی خالق سعدیہ امام نہیں

مشہور زمانہ گیت "جیا دھڑک دھڑک جائے" کی خالق سعدیہ امام نہیں

کراچی(نیوزلیب شوبز ڈیسک)اداکارہ سعدیہ امام کا کہا تھا کہ راحت فتح علی خسن کا مشہور گیت”جیا دھڑک دھڑک جائے ان کی تخلیق ہے۔میوزک کمپوزر فیصل رفیع نے سعدیہ امام کے اس جھوٹ کا بھانڈا پھوڑ دیا اور انہوں نے اداکارہ کا دعویٰ مسترد کردیا۔

تفصیلات کے مطابق اداکارہ اور ہوسٹ سعدیہ امام نے گزشتہ دنوں اے آر وائی نیوز کے پروگرام ہر لمحہ پرجوش میں میزبان وسیم بادامی کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے دعویٰ کیا تھا کہ راحت فتح علی خان کی آواز میں گایا ہوا مشہور گیت ’’جیا دھڑک دھڑک‘‘ کی شاعری سعدیہ امام نے خود تحریر کی۔

ایک اور سوال کے جواب میں سعدیہ امام نے یہ بھی دعویٰ کیا تھا کہ بھارتی فلم میٹرو میں شامل ایک اور راحت فتح علی خان کی آواز میں گایا ہوا گیت ’’زندگی سفر میں ہے کٹ رہا ہے راستہ‘‘ کی شاعری بھی اُن کی ہی ہے۔

وسیم بادامی نے اداکارہ سے سوال بھی کیا تھا کہ آخر راحت فتح علی خان نے انہیں اس کا سہرا کیوں نہیں دیا تو سعدیہ امام نے کہا کہ راحت نے مجھے ویسے بہت کریڈٹ دیا۔

البتہ اب اس دعوے کی تردید ’’جیا دھڑک دھڑک‘‘ کے کمپوزر فیصل رفیع نے کر دی ہے اور کہا کہ گانے کی تیاری کے وقت وہ وہاں موجود تھے اور پورا گیت اُن کی موجودگی میں تیار کیا گیا۔ اُن کا کہنا تھا کہ عاصم رضا میری اور دیگر لوگوں میں موجودگی میں ’’جیا دھڑک دھڑک‘‘ کے بول لکھے جبکہ روہیل حیات اور میں نے اسے مل کر کمپوز کیا۔ کمپوزر فیصل رفیع نے سعدیہ امام پر سخت الفاظ میں تنقید کرتے ہوئے انہیں جھوٹا بھی قرار دیا۔