ایپل پر 1 کھرب 89 ارب ہرجانے کا کیس، فیصلہ آج

آئی فون کو سست کرنے کا الزام، امریکی کمپنی ایپل پر ایک کھرب 89 ارب کے ہرجانے کے کیس کا فیصلہ آج ہو گا۔

ڈیلی میل کے مطابق اگر اس کیس میں امریکی کمپنی قانونی جنگ ہار جاتی ہے تو اسے اپنے ہر صارف کو ہرجانے کی صورت میں سینکڑوں پاونڈز ادا کرنے پڑیں گے۔

یہ کیس آئی فون کو استعمال کرنے والے ایک صارف نے ہی دائر کیا ہے، صارف جسٹن کا دعویٰ ہے کہ ایپل نے کارکردگی کے مسائل سے نمٹنے اور پرانے آلات کو اچانک بند ہونے سے روکنے کے لیے سافٹ ویئر اپ ڈیٹس میں پاور مینجمنٹ ٹول کو چھپا کر اپنے آئی فون ہینڈ سیٹس کی کارکردگی کو جان بوجھ کر سست کیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: شہری نے گرل فرینڈ کو مہنگا تحفہ دینے کیلئے آئی فون چھینا

انہوں نے موقف اپنایا ہے کہ اس ٹول کے بارے میں معلومات اس وقت سافٹ ویئر اپ ڈیٹ ڈاؤن لوڈ کی تفصیل میں شامل نہیں تھی اور یہ بھی نہیں بتایا گا تھا کہ یہ صارف کے آلے کو سست کر دے گا۔ یہ دعویٰ آئی فون 6، 6 پلس، 6 ایس، 6 ایس پلس، ایس ای، 7، 7 پلس، 8، 8 پلس اور آئی فون ایکس ماڈلز سے متعلق ہے۔

اس سے قبل ایپل کمپنی 2017 میں ماہرین کی جانب سے غیر معمولی سست کارکردگی جیسی شکایات کے بعد سوفٹ ویئر اپ ڈیٹس کے ذریعے پرانے آئی فونز کی رفتار کم کرنے کا اعتراف کرچکی ہے، تاہم اس قانونی کاروائی کے بارے میں ایپل کی جانب سے کوئی ردعمل نہیں دیا گیا ہے۔